[ہفتہ ٴ غزل] ۔ اپنے خوں سے جو ہم اک شمع جلائے ہوئے ہیں ۔ سحر انصاری

غزل

اپنے خوں سے جو ہم اک شمع جلائے ہوئے ہیں
شب پرستوں پہ قیامت بھی تو ڈھائے ہوئے ہیں

جانے کیوں رنگِ بغاوت نہیں چھپنے پاتا
ہم تو خاموش بھی ہیں سر بھی جھکائے ہوئے ہیں

محفل آرائی ہماری نہیں افراد کا نام
کوئی ہو یا کہ نہ ہو آپ تو آئے ہوئے ہیں

وقت کو ساعت و تقویم سمجھنے والوں
وقت ہی کے تو یہ سب حشر اُٹھائے ہوئے ہیں

اک تبسم کو بھی انعام سمجھتے ہیں سحر
ہم بھی کیا قحطِ  محبت کے ستائے  ہوئے ہیں

سحر انصاری

0 تبصرہ جات : اپنی رائے کا اظہار کریں:

رعنائیِ خیال پر تبصرہ کیجے ۔ بذریعہ فیس بک