اعتدال اور انصاف کی راہ


آج کل انتہا پسندی کی اصطلاح بہت عام ہے ہونی بھی چاہیے کہ ہم سب ہی اس کا شکار ہیں اور سخت اذیت اور اضطراب میں مبتلا ہیں۔ انتہا پسندی کی اور جو بھی وجوہات ہوں لیکن بنیادی وجہ ہمارے ملک میں تعلیم و تربیت کی سہولتوں کا فقدان ہے۔ سب کے لئے عمدہ، اعلیٰ اور یکساں تعلیم ہمارے اربابِ اختیار کی ترجیحات میں کبھی رہی ہی نہیں ( وسائل کا معاملہ ثانوی ہے)۔ شاید یہی وجہ ہے کہ جو علاقے جتنے زیادہ پسماندہ ہیں اُتنے ہی انتہا پسندی کی آماجگاہ بنے ہوئے ہیں اور ہمارا اجتماعی شعور اب بھی اتنا پست ہے کہ ہم صحیح اور غلط کی تمیز نہیں کر پاتے۔

قطعہ نظر ان سب باتوں کے میں آج جس انتہا پسندی کی بات کرنا چاہ رہا ہوں وہ ہمارے رویّوں کی انتہا پسندی ہے اگر ہم اپنے رویّوں پر غور کریں تو ہم سب ہی کہیں نہ کہیں انتہا پسند واقع ہوئے ہیں۔ شاید آپ کو یہ سن کر حیرت بھی ہو کیونکہ ہم میں سے کوئی بھی یہ نہیں چاہتا کہ اُسے انتہا پسندوں کی فہرست میں گنا جائے۔ لیکن زیادہ اہم بات یہ ہے کہ کیا ہم واقعی ایسا چاہتے ہیں۔

چلئے اس بحث کا آغاز "بحث" ہی سے کرتے ہیں۔ ہم میں سے کتنے لوگ ہیں جو بحث کے آغاز پر یہ سوچتے ہیں کہ زیرِ بحث معاملے میں اُن کا موقف بھی غلط ہو سکتا ہے اور اگر کوئی شخص اُنہیں مناسب اور مستند دلائل دے تو وہ قائل بھی ہو سکتے ہیں۔ شاید ایسے لوگ ایک فیصد بھی نہ ہوں۔ اس کے برعکس جب ہم بحث کا آغاز کرتے ہیں تو ہمارے ذہن میں اس کے سوا کوئی مقصد نہیں ہوتا کہ ہم اپنے دلائل سے سامنے والے کو لاجواب کردیں اور اُسے ہمارا موقف مانتے ہی بنے ۔ شاید ہم سب یہی سوچتے ہیں کہ ہم تو حق پر ہیں اور سامنے والا غلط تو پھر اُسے ہی ماننا چاہیے ہم کیونکر حق سے روگردانی کے مرتکب ہوں۔ یہی وہ وجہ ہے کہ صحت مند بحث کا آغاز ہو ہی نہیں پاتا اور ہم دلائل سے طعن و دشنام اور پھر کفر و باطل کے فتووں پر اُتر آتے ہیں۔

یہ ہمیں لوگ ہیں جو بحث مذہبی ہو تو اپنے مخالف کو کافر اور زندیق سے کم درجہ دینے پر راضی نہیں ہوتے اور اگر بات سیاسی نوعیت کی ہو تو فریقِ مخالف کو ملک دشمن ، امریکہ کا یار اور یہودیوں اور را کا ایجنٹ بنانے میں دیر نہیں کرتے ۔ سیکولر طبقہ کسی بھی مذہبی سوچ رکھنے والے کو طالبان جیسے سفاک لوگوں سے ملانے سے گریز نہیں کرتا اور مذہبی طبقہ ہر لبرل اور آزاد سوچ رکھنے والے کو سیکولر، سوشلسٹ اور دہریا قرار دینے میں ہی اپنی جیت سمجھتا ہے۔

سیاسی عقیدت مندی میں ہم صحیح کو غلط اور غلط کو صحیح قرار دینے کے لئے ایڑی چوٹی کا زور لگا دیتے ہیں۔ ہم اپنے ممدوح کی اچھی باتوں کا تو پروپیگنڈا کرتے ہی ہیں بری باتوں کا بھی پوری شد ومد سے دفاع کرتے ہیں۔ رہے ہمارے سیاسی حریف تو اُن کے ہر اقدام کو غلط اور ملک دشمنی قرار دے دینا ہمارے لئے کون سا مشکل ہے۔ مذہبی عقیدت مندی کو تو جانے ہی دیجیے۔

شاعری کو لے لیجے۔ ہمارا شاعر اپنی شاعری میں انوکھا پن اور شدتِ اظہار کے لئے خدا سے جا اُلجھتا ہے اور گستاخی کو گستاخی بھی نہیں سمجھتا ۔ فلمی گیتوں کو تو چھوڑ ہی دیجے کہ اُن کی تو کوئی حد ہی متعین نہیں ہے۔ یہی شاعر جب نعت لکھتا ہے تو نبی کی ذات کو خدا سے جا ملاتا ہے اور اسے اس بات کا احساس تک نہیں ہو پاتا۔

یہی حد سے بڑھی ہوئی خوش اعتقادی لوگوں کو نام نہاد پیر وں فقیروں کے در کا گدا بنا دیتی ہے اور وہ اپنے جیسے محتاج لوگوں سے ہی حاجت روی اور مشکل کشائی کی اُمید کرنے لگتے ہیں اور اللہ رب العزت کی ذاتِ عظیم کو بھلا بیٹھتے ہیں کہ جس کے خزانوں میں کوئی کمی نہیں اورجو واقعتا دینے والا اور مشکل کشائی کرنے والا ہے۔

ان چند مثالوں کے علاوہ بھی اس طرح کے بہت سے مظاہر ہمارے ارد گرد ہی نظر آتے ہیں بس شرط آنکھیں کھلی رکھنے کی ہے۔ انتہا پسندی کے سب سے زیادہ نقصانات ہماری ذات ہی کو پہنچتے ہیں کہ ہم اس وجہ سے بہت سے دوستوں کو کھو دیتے ہیں اور بغض اور نفرت جیسے منفی رویوں میں گھر کر اپنا بھی دن رات کا سکون غارت کر بیٹھتے اور دوسروں کے لئے بھی تکلیف کا باعث بنتے ہیں۔

ان سب معاملات سے بچنے کا ایک ہی آسان سا نسخہ ہے اور وہ ہے اعتدال اور انصاف کی راہ ۔ اگر ہم صرف اتنا سا خیال رکھیں کہ ہم کسی کی دوستی اور دشمنی میں اتنے آگے نہ نکل جائیں کہ انصاف کا دامن ہی ہاتھ سے چھوٹ جائے تو بہت سے لا یعنی مباحث جنم ہی نہ لیں اور نہ ہی دوستوں کے درمیان بے جا رنجشیں اور دوریاں پیدا ہوں۔

خیالِ خاطر ِاحباب چاہیے ہردم
انیس ٹھیس نہ لگ جاے آبگینوں کو

کیا حرج ہے اگر ہم اپنے رویّوں پر نظرِ ثانی کرتے رہیں۔



11 تبصرہ جات : اپنی رائے کا اظہار کریں:

افتخار اجمل بھوپال کہا...

بہت خُوب ۔ اللہ کرت سب اس تحریر کو سمجھنے کی کوشش کریں

محمداسد کہا...

بہت خوب! بہت عمدہ. آپ کے خیال کی رعنائی قابل تعریف ہے.
ہمارے آس پاس ایسی کئی مثالیں موجود ہیں جو مذہبی و سیاسی انتہاپسندی کے خلاف ہوتے ہوئے بھی بذات خود انتہاپسندی کا شکار ہیں. وہ لوگ شاید یہ گمان کر بیٹھے ہیں کہ انتہاپسندی کا خاتمہ بھی انتہاپسندی سے ممکن ہے، جو کہ سو فیصد غلط تصور ہے.

عنیقہ ناز کہا...

سب ہی ایسی اچھی اور پیاری باتوں کی تعریف کرتے ہیں. میں بھی کرونگی. بہت اچھا لکھا آپ نے. اب یہ بات الگ کہ در حقیقت ہوگا کیا.

Jafar کہا...

بہترین۔۔۔۔

محمد احمد کہا...

بہت شکریہ افتخار اجمل بھوپال صاحب،

یہ سب کچھ کسی خاص طبقے کے لئے نھیں ہے بلکہ میرے آپ کے اور ہم سب لوگوں کے لئے ہے، ہم کسی اور کے لئے جواب دہ ہرگز نہیں ہیں بس ہم سب کو خود احتسابی سے کام لینا ہوگا گا۔ اگر سب لوگ اپنے حسے کا کام کر لیں تو اجتماعی تصویر از خود بہتر ہو جائے گی۔ ۔

محمد احمد کہا...

محمد اسد صاحب،

بلاگ پر خوش آمدید! بلاگ کو آپ نے سراہا مجھے خوشی ہوئی لیکن مجھے زیادہ خوشی اس بات کی ہے کہ آپ نے میرے خیال کی تائید کی۔

محمد احمد کہا...

عنیقہ صاحبہ، اگر میں نے یہ تحریر اس لئے لکھی ہوتی کہ دوست میری تعریف کریں تو مجھے آپ کا تبصرہ پڑھ کر بہت خوشی ہوتی۔ لیکن مجھے آپ کا تبصرہ پڑھ کر کوئی خوشی نہیں ہوئی۔ ۔ بلکہ آپ کا تبصرہ پڑھ کر مجھے لگا کہ شاید میں اپنے مطمحِ نظر کی ترسیل میں کامیاب نہیں ہو سکا یا پھر دوست وہ سننا ہی نہیں چاہتے جو میں کہنا چاہتا ہوں۔ ۔

بہر کیف آپ کی تبصرے کا شکریہ

محمد احمد کہا...

بہت شکریہ جعفر بھائی!

۔

ابوشامل کہا...

محمد احمد صاحب بہت ہی زبردست تحریر ہے۔ واقعی انتہا پسندی کو آپ نے مذہب سے لے کر شاعری تک جس طرح آسان انداز میں بیان کیا ہے، اس نے مجھ جیسے کئی لوگوں کو بھی اپنے رویوں پر سوچنے پر مجبور کر دیا ہے۔
ویسے موجودہ دور میں انتہا پسندی کی خاص تعریف متعین کی گئی ہے، آپ نے اچھا کیا اسے مزید واضح کر کے بیان کیا۔ امید ہے آپ کے خیالوں کی رعنائیاں یہاں ملتی رہیں گی۔ :) ۔

محمد احمد کہا...

شکریہ فہد بھائی کہ آپ نے میری کوشش کو سراہا بات اس سے زیادہ ہرگز نہیں ہے کہ ہم سب اپنے اپنے اعمال اور افکار کے لئے جوابدہ ہوں جائیں۔

نیرنگ خیال کہا...

اعتدال کا درس تو ہمارے مذہب میں ہر جگہ ہے۔ یہاں تک کے وضو کرنے کے دوران بھی پانی کے اسراف سے منع کیا گیا ہے۔ کیا کمال تحریر ہے احمد بھائی۔ یہ اعتدال ہمارے رویوں میں آجائے اس سے زیادہ ضرورت فی زمانہ میں کسی اور چیز کی نہیں سمجھتا۔
اللہ آپکوسدا خوش و خرم رکھے۔

ایک تبصرہ شائع کریں

اردو میں تبصرہ پوسٹ کرنے کے لیے ذیل کے اردو ایڈیٹر میں تبصرہ لکھ کر اسے تبصروں کے خانے میں کاپی پیسٹ کر دیں۔


FB Like Test

رعنائیِ خیال پر تبصرہ کیجے ۔ بذریعہ فیس بک