غزل ۔ تیرے جلوے اب مجھے ہر سو نظر آنے لگے ۔ صباؔ افغانی

غزل

تیرے جلوے اب مجھے ہر سو نظر آنے لگے
کاش یہ بھی ہو کہ مجھ میں تُو نظر آنے لگے

اِبتدا یہ تھی کہ دیکھی تھی خوشی کی اک جھلک
انتہا یہ ہے کہ غم ہر سُو نظر آنے لگے

بے قراری بڑھتے بڑھتے دل کی فطرت بن گئی
شاید اَب تَسٗکین کا پہلو نظر آنے لگے

ختم کردے اے صباؔ اب شامِ غم کی داستاں
دیکھ اُن آنکھوں میں بھی آنسو نظر آنے لگے

صباؔ افغانی

تصویر پر کلک کیجے۔

افتخار عارف کی دو خوبصورت غزلیں

افتخار عارف کی دو خوبصورت غزلیں

قِصّہ ٴاہلِ جنُوں کوئی نہیں لِکّھے گا
جیسے ہم لِکھتے ہیں، یُوں کوئی نہیں لِکّھے گا

وَحشتِ قلبِ تپاں کیسے لکھی جائے گی!
حالتِ سُوزِ دَرُوں، کوئی نہیں لِکّھے گا

کیسے ڈھہ جاتا ہے دل، بُجھتی ہیں آنکھیں کیسے؟؟
سَر نوِشتِ رگِ خُوں، کوئی نہیں لِکّھے گا

کوئی لِکّھے گا نہیں ، کیوں بڑھی، کیسے بڑھی بات؟؟
کیوں ہُوا درد فزُوں؟ کوئی نہیں لِکّھے گا

خلقتِ شہر سَر آنکھوں پہ بِٹھاتی تھی جنہیں 
کیوں ہُوئے خوار و زبُوں؟ کوئی نہیں لِکّھے گا

عرضیاں ساری نظر میں ہیں رَجَز خوانوں کی
سب خبر ہے ہمیں، کیُوں کوئی نہیں لِکّھے گا

شہر آشُوب کے لکھنے کو جگر چاہیے ہے
مَیں ہی لِکُّھوں تو لکُھوں، کوئی نہیں لِکّھے گا! 

بے اثر ہوتے ہُوئے حرف کے اِس موسِم میں 
کیا کہُوں،کس سے کہُوں، کوئی نہیں لِکّھے گا

✿✿✿✿✿✿✿

دل کو دِیوار کریں، صبر سے وحشت کریں ہم
خاک ہو جائیں جو رُسوائی کو شُہرت کریں ہم

اِک قیامت کہ تُلی بیٹھی ہے پامالی پر
یہ گُزرلےتوبیانِ قد وقامت کریں ہم

حرف ِ تردید سے پڑ سکتے ہیں سَو طرح کے پیچ
ایسے سادہ بھی نہیں ہیں کہ وضاحت کریں ہم

دل کے ہمراہ گزارے گئے سب عُمرکے دِن
شام آئی ہے تو کیا ترکِ محُبت کریں ہم

اک ہماری بھی امانت ہے تہ ِ خاک یہاں
کیسے ممکن ہے کہ اس شہر سے ہِجرت کریں ہم

دن نکلنے کو ہے چہروں پہ سجا لیں دُنیا
صُبح سے پہلے ہر اِک خواب کو رُخصت کریں

شوق ِآرائش ِ گل کایہ صلہ ہے کہ صبا
کہتی پھرتی ہے کہ اب اور نہ زحمت کریں ہم

عُمر بھر دل میں سجائے پھرے اوروں کی شبیہ
کبھی ایسا ہو کہ اپنی بھی زیارت کریں ہم


افتخار عارف

ٰImage Credit : Urdu Mehfil

منہ دھو رکھیے [فیس واش کی فسوں کاریاں]

منہ دھو رکھیے
فیس واش کی فسوں کاریاں​


از ۔۔۔ محمد احمدؔ​

منہ دھو رکھنے کا مشورہ زندگی میں کبھی نہ کبھی آپ کو بھی ضرور ملا ہوگا۔ یہ الگ بات ہے کہ آپ نے اسے مشورہ سمجھا ہی نہ ہو۔ اگر سمجھا ہوتا تو طبیعت کے ساتھ ساتھ چہرے کی جلد بھی صاف ہو جاتی۔ لگے ہاتھ چہرے کا نکھار ، طعنے کی پھٹکار کو کچھ مندمل بھی کر دیتا۔ اسی لئے کہتے ہیں کہ سمجھ بڑی چیز ہے اور سمجھداری اُس سے بھی زیادہ ۔کم از کم تعداد ِ حروف کی بنیاد پر۔

ہم یہ بھی سمجھتے ہیں کہ اکثر لوگ بغیر مشورے کےہی منہ دھو رکھتے ہیں اور کچھ لوگ اس کے لئے بڑے جتن بھی کرتے ہیں۔ جتن کرنا اس لئے بھی ضروری ہے کہ کاسمیٹکس والے یہ بات لوگوں کے ذہنوں میں بٹھا چکے ہیں کہ خوبصورت لگنا آپ کا حق ہے۔ خوبصورت ہونے کو آپ کا حق کہنے سے اُنہوں نے بھی گریز کیا کہ یہ آسمان سے دشمنی مول لینے والی بات ہے۔

پہلے زمانے میں خوبصورتی کے معیار اور تھے۔ پہلے زیادہ تر وہی لوگ خوبصورت نظر آتے تھے جو خوبصورت ہوتے بھی تھے اور اُنہیں اس کے لئے بہت زیادہ جتن بھی نہیں کرنے پڑتے تھے۔ لیکن اب اور سے اور ہوئے 'حُسن' کے عنواں 'پیارے'!


پہلے زمانے میں منہ دھونے کا کام زیادہ تر خواتین ہی کیا کرتی تھیں اور مرد حضرات یہ کہہ کر کہ 'شیروں کے بھی کبھی منہ دُھلتے ہیں'، اپنی کاہلی پر بہادری کا پردہ ڈال دیا کرتے تھے۔ خواتین بھی منہ دھونے کا کام کپڑے دھونے کے صابن سے ہی لے لیا کرتی تھیں ۔ یعنی کپڑے دھونے کے بعد اُسی صابن سے منہ بھی دھو لیا کرتیں۔ سیدھے سادھے صابن میل کو اُتار پھینکتے اور اُن کی رنگ کاٹنے کی صلاحیت خواتین کی فئیر نیس کو جلا بخشتی۔ اللہ اللہ خیر صلا۔

تاہم جیسے جیسے آسماں رنگ بدلتا ہے زمین والے بھی رنگ ڈھنگ بدلتے رہتے ہیں۔ صابن کی جگہ فیس واش نے لے لی اور رنگ کاٹ کی جگہ فئیرنیس کریم نے ۔ یعنی اب جس صابن سے ہاتھ دھوئے جائیں اُسی سے منہ بھی دھو لینا نری جہالت سمجھا جانے لگا۔ اب آپ سر پر شیمپو لگائیں گے منہ پر فیس واش، ہاتھوں پر ہینڈ واش اور یوں آپ کے اور سرمایہ داروں کے بیچ مالی عدم توازن کاتوازن برقرار رہنے کی سبیل ہو سکےگی۔

رواں سال جب ہماری عمر رواں کو دائمی اسیری سے روشناس کرانے کی تقریبات درپیش تھیں تو ہمیں بھی یہ مشورہ دیا گیا کہ اپنا خیال رکھیے اور خود کو تھوڑا خوش وضع بنانے کی کوشش کریں۔ اگر ہمارے ساتھ یہ مسئلہ درپیش نہ ہوتا تو شاید ہمیں پتہ ہی نہیں چلتا کہ لوگ ایک مدتِ طویل و بسیط سے ہمیں خوش وضع سمجھنے سے عاری ہیں اور اب بھی جس مَرے دل سے یہ مشورے دیے جا رہے ہیں تو اس سے گمان ہوتا کہ انہیں اپنی اُمیدوں کے بر آنے کی کوئی خاص اُمید بھی نہیں ہے۔

اُمید تو ہمیں بھی کوئی خاص نہیں تھی لیکن اس خیال سے کہ کہیں سیاہ و سفید کے مطلق تضاد سے لوگوں کی طبیعت ہی مکدر نہ ہو جائے، ہم نے خود کو کسی نہ کسی طرح راضی کیا کہ روز کے چار چھ دقیقے فروگزاشت ہونے سے بچا لیں اور اس سلسلے میں صرف کر دیے جائیں تاکہ اپنے چہرے کو چہرہ انور میں ڈھال کر سزاوارِ نمائش بنایا جا سکے۔ سزاوار کی سزا کو ہر دومعنی میں پڑھا جا سکتا ہے۔

سچ پوچھیں تو فیس واش سے یہ ہمارا پہلا تعارف نہیں تھا۔ اول اول جب ہم اس جہانِ حسن افروز سے روشناس ہوئے تو جو پہلا فیس واش ہم نے استعمال کیا وہ ایسا تھا کہ گویا ہم نے چہرے پر موبل آئل مل لیا ہو اور اُس کی چکنائی کو دھونے کے لئے نئے بونس کی ضرورت محسوس ہوتی تھی۔ کافی دیر چہرہ رگڑنے کے بعد احساس ہوتا کہ یہ تو کولھو کے بیل کی طرح چلتے رہنے جیسا معاملہ ہے یعنی اگر ساری زندگی چہرہ رگڑتے رہیں تو بھی ضرورت تمام نہیں ہوگی۔ تاہم اُن دنوں چونکہ معاملہ اتنا گھمبیر نہیں تھا سو ہماری کاہلی اور غیر مستقل مزاجی نے آڑے آ کر فیس واش کے مذموم عزائم خاک میں ملا دیے اور یوں ہمارا چہرہ چکنا گھڑا بنتے بنتے رہ گیا۔

تاہم اس بار ہم نسبتاً سنجیدہ تھے سو بھول چوک کے عفریت کو ہردوسرے تیسرے روز قابو کر ہی لیتے اور ناممکن کو ممکن بنانے کی سعی میں لگ جاتے۔

اس بار ہم نے کچھ دوسرے برانڈز آزمانے کا فیصلہ کیا۔ تاہم اندازہ ہوا کہ :


ع۔ جو ذرہ جس جگہ ہے وہیں آفتاب ہے

اور


ع۔ ملے نہیں ہیں جو 'برانڈ' اُن کی مہربانی ہے۔

خیر ! سیاہ کو سفید کرنے کی اس نئی مہم میں جو پہلا فیس واش ہم نے استعمال کیا وہ اپنی طبعیت میں بڑا سفاک ثابت ہوا۔ اسے لگا کر یوں گمان ہوتا کہ جیسے اس میں ریت کی کنکریاں سی ملائی ہوئیں ہیں جو جلد میں جا بجا چھوٹے چھوٹے گڑھوں کی تخلیق کا کام کرتی ہیں اور ہمارے چہرے کے سیاہ خلیوں کو میل سمجھ کر نسبتاً کم سیاہ خلیوں سے الگ کرنے کا کام کرتی ہیں۔ ہمارا خیال ہے کہ اگر اس فیس واش کی خدمات میسر ہوں تو ریشمی کپڑے سے اسکاچ برائٹ بھی بنایا جا سکتا ہے۔ چھوٹی چھوٹی سی کنکریوں سے چہرے کو چھلنی کر دینے والے اس فیس واش کا کام اتنا ہی تھا کہ بے تحاشہ روزن ہمارے چہرے کی جلد میں بنادے اور ہمارا باطنی نور اِن روزنوں سےجھانک جھانک کر چہرے کو تابناک بنا دے۔ اُن دنوں یہ خیال بھی آیا کہ جن کا اندروں تاریک تر ہوتا ہوگا اُن کے چہرے کے روشن ہونے کی کیا سبیل بنتی ہوگی۔ یقنیاً حلق میں چائنا کی چھوٹی والی ٹارچ رکھ کر گھومنے کے علاوہ تو کوئی حل نہیں ہوگا۔

اگلا فیس واش سفاک نہیں تھا بلکہ کافی حد تک عیب پوشی کرنے والا تھا ۔ یوں گماں ہوتا تھا کہ جیسے کسی نے ٹالکم پاؤڈر کو پانی میں گھول کر پیش کر دیا ہو۔ یعنی چہرے کی جلد جیسی بھی ہو اُوپر اُوپر سفیدی کا لیپ کر دیا جائے۔ اِسے آپ طنزاً کاسمیٹک تبدیلی بھی نہیں کہہ سکتے کہ یہ فی الواقعہ کاسمیٹک تبدیلی ہی تھی۔

کافی بعد میں ہمیں یہ عقل آئی کہ یہ دونوں فیس واش ایک ساتھ بھی تو استعمال کیے جا سکتے ہیں۔یعنی اول الذکر چہرے میں گڑھے کھودنے کے لئے اور ثانی الذکر اُن گڑھوں کو سفیدےسےبھرنے کےلئے۔ لیکن ناتجربے کاری کے باعث شروع شروع میں ہم نے یوں کیا کہ دوسرا فیس واش دھونے میں کچھ زیادہ محنت کرلی ۔ جس سے ہوا یوں کہ اوپر اوپر سے سفیدی دُھل گئی اور صرف پہلے فیس واش کے تیار کردہ گڑھوں میں باقی رہ گئی۔ اب چہرہ کچھ ایسا ہوگیا کہ جیسے کسی جلے ہوئے بیکری والے بن پر جا بجا سفید تل چپکے نظر آ رہےہوں۔

آپ سوچ رہے ہوں گے کہ پتہ نہیں اتنا کچھ کرنے کے بعد بھی ہمارے منہ پر کچھ رونق آئی بھی یا نہیں ۔ تو ہم کہیں گے کہ ہم کچھ یقین سے نہیں کہہ سکتے کہ اتنے تجربات کرکے ہم تو کافی شش و پنج بلکہ کسی حد تک ہشت و ہفت کا شکار ہوگئے تھے۔ رہے وہ لوگ جن سے ہم نے اپنی اس مشقت اور اُس کے حاصل حصول کے بارے میں رائے لی تو اُن میں دو طرح کے لوگ ملے ایک وہ جو منہ دیکھے کی تعریف کرنے لگے اور دوسرے وہ جو محض ہمارا منہ دیکھ کر چپ ہو گئے۔بہرکیف ہمیں ہر دو طرح کے احباب سے ہمدردی ہے اور سوچتے ہیں کہ آئندہ کبھی انہیں ایسے کڑے امتحان میں نہ ڈالا جائے۔

FB Like Test

رعنائیِ خیال پر تبصرہ کیجے ۔ بذریعہ فیس بک