یاد آتے رہنا بس ۔۔۔

غزل

یاد آتے رہنا بس
دل دُکھاتے رہنا بس

اور کام کیا تم کو
آزماتے رہنا بس

دل پہ گرد کتنی ہو
چمچماتے رہنا بس

زندگی یہی تو ہے
مسکراتے رہنا بس

حالِ دل رہے دل میں
گنگناتے رہنا بس
سیکھنا ہر اچھی بات
اور سکھاتے رہنا بس

بات بات پر ہنسنا
اور ہنساتے رہنا بس

دل شکستہ کوئی ہو
دل بڑھاتے رہنا بس

دل کے ساز پر اکثر
گیت گاتے رہنا بس

محمد احمدؔ​

رعنائیِ خیال پر تبصرہ کیجے ۔ بذریعہ فیس بک