ماہِ رمضان اور تین شارٹ کٹس


ہم میں سے اکثر لوگ کسی کا م کی انجام دہی کا آسان طریقہ یا شارٹ کٹ تلاش کرنے کی کوشش کرتے ہیں ۔ شارٹ کٹ تلاش کرنا کوئی ایسی بُری بات بھی نہیں ہے لیکن کم از کم دو شرائط ضرور پوری ہونی چاہیے۔ پہلی شرط تو یہ ہے کہ شارٹ کٹ سے حاصل ہونے والا نتیجہ بھی بعینہ ویسا ہی ہو جیسا کہ مروجہ راستہ اختیار کرنے سے حاصل ہوتا ہے اور دوسری شرط یہ کہ شارٹ کٹ صرف اُس وقت قابلِ قبول ہوگا جب کسی کام کرنے کا متعیّن طریقہ مطلوب و مقصود ہدف کا لازمی جز نہ ہو۔

فرض کیجے کچھ لوگ ایک میدان میں مسابقت کی دوڑ لگاتے ہیں اور یہ طے ہوتا ہے کہ جو شخص میدان کا چکر سب سے پہلے کاٹ کر متعین کردہ مقام پر پہنچ جائے گا وہ دوڑ کا فاتح قرار پائے گا ۔ عموماً دوڑ ختم ہونے کا مقام دوڑ شروع ہونے کے مقام سے ذرا سا ہی پیچھے ہوتا ہے ۔ لیکن اگر کوئی شخص میدان کا چکر پورا کرنے کے بجائے پیچھے مُڑے اور بھاگ کر دوڑ ختم ہونے کے مقام پر پہنچ جائے تو وہ فاتح ہرگز نہیں کہلائے گا کیونکہ میدان کا چکر مکمل کرنا فتح حاصل کرنے کے لئے ضروری تھا۔ سو اکثر اوقات شارٹ کٹس اس لئے اچھے نہیں ہوتے کہ وہ مطلوبہ طریقے سے صرفِ نظر کرتے ہیں اور پیشِ نظر سرگرمی کا حاصل اپنی اہمیت کھو بیٹھتا ہے۔

اسی طرز پر ماہِ رمضان میں بھی ہم لوگوں نے کچھ شارٹ کٹس ڈھونڈ لیے ہیں، آج ہم اُنہی کا ذکر کریں گے۔

سب سے پہلے ذکر کریں گے چھ روزہ یا دس روزہ تراویح کا۔ آج کل ہمارے ہاں چھ روزہ یا دس روزہ یا پندرہ روزہ تراویح پڑھنے پڑھانے کا بہت رجحان ہے۔ اس طرز کی تراویح کاروباری حضرات بہت پسند کرتے ہیں کہ وہ رمضان کے شروع میں ہی تراویح کے فریضے سے نمٹ جاتے ہیں اور آخر کے دنوں میں جب عید کی خریداری عروج پر ہوتی ہے تو وہ تراویح سے بچنے والا وقت اپنے کاروبار کو دے سکتے ہیں۔ دیکھا جائے تو یہ سوچ بھی بُری نہیں ہے تاہم چونکہ یہ مروجہ طریقے سے ہٹ کر ہے سو اس سے احتراز کرنا چاہیے۔

اُس کے بعد وہ لوگ آتے ہیں جو سحر کے وقت اُٹھنے کی زحمت سے بچنے کے لئے رات کو ہی کھا پی کر سو جاتے ہیں اور سحری میں اُٹھنے کے بجائے فجر کی نماز میں ہی اُٹھتے ہیں اور کچھ لوگ تو فجر میں بھی نہیں اُٹھتے۔ اسلام میں سحری کھانے کی بڑی فضیلت بتائی جاتی ہے سو کوشش کرنی چاہیے کہ سحری کھائی جائے اور تھوڑی سی زحمت اُٹھا کر اس نعمت سے محروم نہ رہا جائے۔

کچھ لوگ یوں بھی کرتے ہیں کہ صبح سحری اور نماز سے فراغت کے بعد سو جاتے ہیں اور پھر سارا دن سوتے رہتے ہیں۔ کچھ نمازِ ظہر کے بعد اُٹھتے ہیں کچھ تو عصر بھی گنوا دیتے ہیں۔ گو کہ روزے میں سونے کی ممانعت نہیں ہے بلکہ روزہ دار کو تو سونے کا بھی ثواب ملتا ہے لیکن کثر ت سے سونے سے آپ بھوک اور پیاس کے احساس سے بچ جاتے ہیں۔ نتیجتاً آپ اس عبادت کی روح سے محروم ہو جاتے ہیں یعنی ایسا روزہ آپ میں دوسروں کی محرومیوں اور بھوک پیاس کا احساس نہیں جگا پاتا ۔ جب کہ روزہ تو نام ہی اس احساس کے پیدا کرنے کا ہے سو اس معاملے میں بھی احتیاط کی ضرورت ہے۔

آخر میں ایک بات۔ اور وہ یہ کہ یہ سب باتیں عمومی ہیں اور خاکسار کی ذاتی رائے پر مبنی ہیں، سو ان سب باتوں کو سخت تاکید یا فتویٰ سمجھنے کی ہرگز ضرورت نہیں ہے۔ ہاں اگر آپ کو ان میں سے کسی معاملے پر کوئی اشکال ہے تو آپ کتاب و سنت کا علم رکھنے والے حضرات سے پوچھ سکتے ہیں۔

اللہ ہمیں اور آپ کو ماہِ صیام کے فیوض برکات سے کما حقہ فیضیاب ہونے کی توفیق عطا فرمائے۔ آمین۔


14 تبصرہ جات : اپنی رائے کا اظہار کریں:

Bushra کہا...

Mohtrami

Salam e masnoon

Teen shortcuts ke zere unwan Aap ne Acha mazmun likha hai.

Aap ke pesh karda "Murawweja taor tariqe" ko apna maozu banai hoon.


Raat ke aqeer waqt men Sahri karna sunnat hai.

Jo waqt hum log ke han aam taor se moqarrar hai Fajar ki Azan se Just Pahle ka. Sirf yahi waqt sahri karne ka nahi. Goke Sahri in Murawweja waqton men bhi ada ho jati hai.

Sahri karne ka sahi waqt Murawweja waqton se bahot pahle shuru ho jata hai jin waqton men log soe hue hote hain.

Allah ke Nabi (saw) in waqton men Sahri nahi Farmate thay jin waqton men hum log karte hain. Balke Allah ke Nabi (saw) hamare murawwejah waqt se bahot pahle Sahri ada kar chuke hotey thay.

Ab Agar koi Raat der tak Late Night jaaga aur Nafil, Tilawat o Mota'le, Zikr o Azkar ka Ehtemam kiya aur phir usne Sahri ki Niyat ki aur kha pee ker So gaya to Goya ke usne sahi waqt per Sunnat ke lehaz se Sahri adaa ki. Phir so ker Ayn Namaz se qabl bedaar hua aur Tarr o Taza ho ker Qushu Quzu ki haalat men usne Namaze Fajar ada ki.

Murawweja waqton men aam taor se dekha gaya hai ke Azan hone tak log khane piney men lage rahte hain. Phir jaldi jaldi wazu kiye aur Masjid.

Zara Sochye..!!

Ayn waqt per Sahri se pet bhara hua hai. Namaz ki halat men khade hain to Be Dili se. Jamai per jamai le rahe hyn. Kuch to zor zor se dakarte bhi hain. Kyu ke kha jo itna lete hain. Aur kuch jyse neend men hain. Girey padd rahe hain agal bagal walon per. Na Ruku karte ban raha hai na Sajda. Imam ne kya parhaya kya nahi Kuch pata nahi. Ab hosh ho to pata ho.!

Kya ayse admi ki Namaz zyada sahi hogi jo khushu khuzu se mahrum raha aur Be Dili se Namaz ada ki.

Ya..

Jisne Sunnat ko follow o pyrwi karke aram se neend leke sukoon o qushu quzu se Fajar ada ki ho.?

Sunnate Nabawi ke hisab se jisne Sunnat ke Aml o Fel ko eqtyar kiya usey inshallah zyada Ajar o Sawab milega. Ba Nizbat uske jisne Rewajon ko eqtyar kiya aur Be Dili se Namaz ada ki.


بشرٰی خان


Thoda Rest le ker...

Contd..... جاری ہے.......

Muhammad Ahmed کہا...

@بشریٰ خان

آپ تسلی سے اپنی بات مکمل کرلیجے۔ پھر میں جواب دیتا ہوں۔

Bushra کہا...

Mohtrami

Salam e masnoon


Part ..... 2


Sunye Ga.. !

Allah Rabbul Izzat ko Hazir o Nazir jaan ker Mai niche Hadees ka Mafhoom pesh kar rahi hoon. Hadees ke hoo ba hoo alfaz ki tarjumani nahi pesh kar rahi hoon. Is baat ko malhuz rakhye ga.

Tarjumani men kisi ko eqtayar nahi hota ke apni taraf se adna si bhi kami beshi karey.


Ek Hadees ki Tashreeh peshe qidmat hai. Jisey zarurat ho kitabon men dekh le ya tasdeeq karle.


Allah ke Nabi (saw) ki khidmat men kuch Taajir Hazraat hazire qidmat hue.

Aur arz ki...

Ya Rasool Allah.!

Hamlog Tajir hazrat hain. Bazar ki masajid ke imam lambi lambi namazen padhate hyn Aap unhe paband kijye ke moqtasar sureh ki tilawat kiya karen.

Allah ke Nabi (saw) ne Tajir Hazraat ki shikayt sunker Ahkam jari karwa diye ke wo masajid jo bazar se hatker hon un Imamon ko eqtyar hai ke apni marzi se Namaz parhayn. Albatta jo Masajid Bazar men hon wahan ke Imam Moqtasar Tilawat kiya karen. Aysa na ho ke musallieen Be Dili se Namaz ada kar rahe hon. Ke dimag dukan men atka ho aur Pesh Imam hyn ke apni dhun men hyn.

........... End

Mandirja baala Hadees ki tashreeh pesh karne ka maqsad sirf ye hai ke "karobari hazraat apne karobar ki fikar karte hyn jo ke bura nahi per Murawweja tarikon se hatker hai so isse eteraz karna chahye".

Karobari hazraat ka apne karobar ki fikar karna koi Gunah to na hua. Unka haq banta hai fikar karna. Hadees bhi yahi sabit karti hai ke karobar walon ka haq jaez hai. Agar wo sochte hain ke moqtasar Taraweeh ada karke faarig ho jaynge to ye unke liye jaez hoga. Is soch men koi Aybb nahi.

Karobari hazraat dusre aur logon se hutker Nek kamon Zyada se zyada balke kaheen zyada hissa bhi to lete hain. Ye baat gaor karne wali hai.


Dusri Hadees ka Mafhoom. (Wahan maine Tashreeh likhi hy yahan mafhoom).

Yahan bhi mai sirf Mafhoom pesh kar rahi hoon. Jisey zarurat ho tasdeeq kar le.

Allah ke Nabi (saw) Ramzan ke mahine men Isha ki Namaz ke bad kuch der bythe rahe aur zikr o azkaar men masruf rahe. Allah ke Nabi (saw) ko bytha dekh kar Sahaba keram bhi bythe rahe. Phir Allah ke Nabi (saw) apni jagah se utthe. Aur Tarawih ki Namaz ki Niyat baandh ker Tilawat ki do do rakat karke kuch Namazen Allah ke Nabi (saw) ne parhaieen. Aur sahaba hazrat se mil mila ke apne Hujre men chale gaye. Hujre men jaker wahan bhi Allah ke Nabi (saw) Namazen ada keen. Isi tareh dusre tessre din bhi kuch kami beshi ke sath Taraweeh jamat se parhai. Ek din Isha ki Namaz ke baad Allah ke Nabi (saw) uthe aur apne Hujre men chale gaye. Phir baher nahi aae. Sahaba entezar farma ker apne taor per nafil padh ker apne apne ghar chale gaye. Uske dusre roz Sahaba ke puche jane per ke hamlog aap ka entezar kar rahe thay ke Aap (saw) tashreef laynge per Aap nahi aaye. Usper Allah ke Nabi (saw) ne Arz kiya: Mai isiliye nahi aya ke Aaplog ise Farz na samjhlen. Ye Nafil hai. Inferadi taor per parha karen. Allah ke Nabi (saw) ne Baa Jamat Aat Rakaat se zyada Taraweeh ki Namaz nahi parhai. Aur Aat Rakaat bhi Mutawatir nahi parhai balke kabhi Che to kabhi Char to Kabhi Aat aur Naghe (Gap) ke sath.

Murawweja Bees Rakat koi padta hai to theek hai usko bees ka sawab milega. Aur agar koi Sunnat samajh ker Che Aat Chaar aur Naagha (Gap) de ker ghar men ada karleta ho to usey purah ka purah Sunnat ada karne ka sawab milega.

Isme Olama Hazraat ka bahot kuch eqtelaf hai. Aat Rakaat Tarawi aaj bhi Arab mumalik men synkdon masajid men ba jamat ada hoti hy. Madina munawwara aur Harme paak men Bees Rakaat ka ehtemam hota hai. Wahan kisi ko koi eteraz nahi hota kahne ke liye ke Murawweja tareekon se hatker aysa kyun hota hai ke Haram men to Bees rakat parhai jati hyn aur deegar masajid men Aat kyun parhai jaati hyn.!

Wasallam

Bushra khan

Note: Mohtrami janab Mohomad Ahmed sahab. Apni apni Rae aur Apni apni soch ki baat hai. Iske elawa aur kuch nahi. Mai Talibe ilm hun. Aap Mashallah sahebe fahem hyn.

Bushra کہا...

Mohtrami Mohomad Ahmad sahab

Mai yahan Apni pesh karda Raye se inkar nahi kar rahi hoon.

Hadees ke hawale kisi ko galat lagen to unki taraf se ma'azrat. Isliye ke mazmun post karne ke bad Tajir Hazrat wali Hadees pesh kiye jane per kuch taraddud ho raha hai ke kahin wo mamla Qulfae Rashideen se juda hua to nahi hy. Agar Qulfaye Rashideen se juda ho to baraye meherbani usey delete farma dijye ga. Usey post se hata dijye ga.

Bushra khan

Bushra کہا...

Jee

Mohtrami

Wo sahi Hadees hai
Maine abhi confirm ki hai.

Allah ka shukarr hai meri ghabrahat door hogai.

Muje bad men mogalta hua ke kahin Tajir hazraat Hazrat Umarr (raz) ya Hazrat Abu Baker (raz) ke pass to nahi aye the apni shikayt leker.

Balke Nabi (saw)
hi ke pass aye the. That is confirmed now. Nothing to delete.

Thanks
Bushra khan

bushra khan کہا...

PROBLEM THRU GOOGLE

Maf kijye ga Google ke thru mere msgs Garbled ho rahe hain. Mai Google ko Complaint ki hoon.

Agar aap garble mazmum Read karke matlab samaj pate hon to aap ko thodi zahmat hogi Read karne men.

So, Pls bear with me.

Thanks
Bushra khan

bushra khan کہا...

Ji

Mohtarmi

Salame masnoon

Shukriya aap ki rahnumai ka

Just abhi Apka jawab dekhi hun. Asal me meri urdu typing ka masla pechida noiyat ka hai.

Maslan urdu men QARBUZA/H likhna ho.

Ye samaj na aygi ke QAR خ se hai ya ق se aur BUZA men ز hai ya ذ. Aur last men choti ہ hai ya badi ح hai ya Alif ا.

Isi tarah jyse MOQTASAR likhna ho to kafi der sochna hota hai ke MOQ men ق hai ya خ aur TASAR men س hai ya ص.

Jab kuch palle na padega to Urdu to Eng Dictionary se madad lene men EK DOHRI MUSIBAT YE HOGI ke س aya د se pahle hai ل se pahle ya bad men. Aur ن aya ک ke bad hai ع ke bad. Matlab kon sa huruf kiske pahle hy kiske bad hai ye fauri taor per dimag men nahi ayga Dictionary dekhte waqt.

Ab jyse ص ek lafz hai uske liye sabse pahle mai ا ب پ ت Read karungi jab tak ص na ajayga. Tab hi muje malum hoga ke د aur س ke bad ke pages mujhe ulatna palatna hai tab hi ص ki shakal dikhai degi.

Aur ye har har alfaz ke liye dhundna hota hai. Isse acha khasa exertion ho jata hai ya you samajye Exercise ho jati hai.

Bar bar ye sab karte rahne se tabiyat Rigid ho jati hy.

Urdu ke bar khelaf English men fingers apne aap chalne lagti hyn.

Yahi nahi balke jyse agar, "NA MALUM" likhna ho. Ye samajh na ayga ke youn likhun "نہ مالوم" ya youn "نا معلوم" likhun.

Aur jyse "CHALIYE, AAIYE, JAAIYE, KHAIYE" likhna ho tow چل یے، جای یے، aur KHAIYE ka KHA istareh likha jayga ya istareh کھا/کحا

"BILKUL" jyse milake likhne wale alfaz mujh se nahi ban padte. Mai likhungi بل کل

Ab Aap ki samaj men aya hoga Bahot Typical Case hai mera.

Ye kon sudhaar sakta hai.? Aur in khamiyon ki Problem kyse Solve ho.?

جواب کی منطزر رہونگی.

Wassalam

Bushra khan

bushra khan کہا...

Once again am trying to Reset my message. Let see

bushra khan کہا...

جی محترمی

سلام مسنون

اب میں اردو میں اپنی بات لکھ رہی ہوں. اب چاہے جتنا وقت لگ جائے.

آپ کی رہنمائی کا شکریہ.

اصل میں میری اردو ٹائیپنگ کا مسلہ پیچیدا نویت کا ہے.

مسلن اردو میں "قربوزہ" لکھنا ہو تو یہ سمج نہ آیگی کہ قر ق سے ہے یا خ سے ہے. اور زہ میں ز ہے یا ظ یا ذ ہے. چونکہ میں دیکھ چکی تھی اسی لیئے شاہد سہی لکھ گئی.

اسی طرح مقتصر میں ت ہے یا ط ہے.

جب کچھ پلّے نہ پڈے گا تب اردو انگریزی ڈکشنری سے مدد لینے میں دوہری مصیبت ہے وہ یہ کہ جیسے " سوال" لکھنا ہوگا تو یہ سمجھ نہ آے گا کہ س کس لفض کے بعد اور کس لفض سے پہلے ہے. پھر مجھے ا ب پ ت پڑھ کر س کے آنے تک پڑھنا پڑے گا. تب پتہ چلے گا کے د ڈ ر کے آگے کے صفھات میں س ملے گا. کبھی روانی میں س کے آگے نکل جاوں گی. س نہ ملے گا تو پھر واپس آوں گی. تو یہ عمل بڑا سر دردی والا ماملا ہے میرے لیئے.

بشرٰی خان

Muhammad Ahmed کہا...

بشریٰ بہن

سب سے پہلے تو آپ کا شکریہ کہ آپ اپنا وقت اور توجہ رمضان کے حوالے سے پیش کی جانے والی خاکسار کی تحاریر کو دے رہی ہیں۔

اُس کے بعد یہ عرض کرنا چاہوں گا کہ میری اولین خواہش یہی ہے کہ رمضان کے حوالے سے لکھی جانے والی یہ گذارشات غیر متنازعہ ہی رہیں تاکہ ہر طبقے کے لوگ ان تحریروں سے فائدہ اُٹھا سکیں۔ اسی لئے میری کوشش ہے کہ ان میں اختلافی موضوعات کو زیرِ بحث نہ لایا جائے۔

آپ کی تحریر چونکہ رومن رسم الخط میں ہے سو پڑھنے میں معمولی دشواری ہوئی تاہم بات سمجھ آہی گئ۔ سب سے پہلے سحری کے حوالے سے بات کر لیتے ہیں۔

دراصل اہلِ کتاب (یہود و نصاریٰ) کے ہاں سحری نہیں ہوتی تھی یعنی اہلِ کتاب غروبِ آفتاب کے بعد افطار کرتے تھے اور پھر تمام رات کچھ نہیں کھاتے تھے ۔ یا اگر سو جاتے تو پھر دوبارہ اُٹھ کر کچھ کھانے کی اجازت نہیں تھی ۔ سو ہمارے روزے اور اہلِ کتاب کے روزے کے درمیان سحری کھانے کا فرق ہے۔ اس لئے مسلمانوں کو سحری کھانے کی خاص تاکید کی گئی ہے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ سحری کھایا کرو، کیونکہ سحری کھانے میں برکت ہے۔

رہا سحری کھانے کا وقت تو اُس کی آخری حد صراحت سے بتا دی گئی ہے۔ مزید یہ کہ سحری کے وقت میں اور اذانِ فجر میں کچھ وقفہ ہوتا ہے ۔ ہاں وہ لوگ جو ضرورت سے زیادہ کھا لیتے ہیں وہ اگر نماز میں پریشان ہوتے ہیں تو یہ اُن کا معاملہ ہے۔ بسیار خوری کی جائے تو یہی بات مغرب یا عشاء کی نماز پر بھی صادق آسکتی ہے۔

Muhammad Ahmed کہا...

گو کہ قیام اللیل یا تراویح نفلی عبادت ہے لیکن اس کی بہت فضیلت ہے۔ اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا کہ جس شخص نے ایمان کی حالت میں حُصولِ ثواب کے لئے رمضان میں قیام کیا، اُس کے گذشتہ گناہ بخشے جاتے ہیں۔

آپ نے جو حدیث شامل کی اس کا خلاصہ کچھ یوں ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک رات جماعت کے ساتھ نمازِ تراویح پڑھائی ۔ پھر دوسری رات بھی جماعت کے ساتھ نمازِ تراویح پڑھائی۔ تیسری رات عشاء کے بعد آپ صلی اللہ علیہ وسلم جب اپنے حجرے میں چلے گئے تو واپس نہ آئے اور صحابہ کرام انتظار کرتے رہے۔ اگلے روز صحابہ کہ پوچھنے پر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے بتایا کہ میں اس لئے باہر نہیں آیا کہ مجھے ڈر ہوا کہ کہیں یہ نماز مسلمانوں پر فرض نہ کر دی جائے۔

جب کہ آپ نے لکھا ہے کہ "مسلمان اسے فرض نہ سمجھ لیں۔"

بعد کے ادوار میں حضرتِ عمر فاروق رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے نمازِ تراویح کو باجماعت پڑھانے کا حکم دے دیا۔ چونکہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم سے اس نماز کو جماعت سے پڑھانا ثابت تھا اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے وصال کے بعد اس نماز کے فرض ہونے کا امکان بھی نہیں تھا سو ایسا کرنے میں کوئی قباحت نہ تھی۔

تاہم قرونِ اولیٰ میں چھ روزہ یا پندرہ روزہ تراویح وغیرہ کا رواج نہیں تھا۔ یہ رواج بعد میں ہوا جو کہ سلف صالحین کے عمل کے خلاف ہے۔ مسلمانوں کے لئے بہترین عمل وہی ہے جس کا ثبوت خیر القرون میں ملتا ہے۔


اس کے علاوہ وہ طبقہ بھی جو اس طرح کی تراویح کا قائل ہے اُن کا موقف بھی یہ ہے کہ چھ روزہ یا پندرہ روزہ تراویح ختم ہونے پر لوگ تراویح نہ چھوڑیں بلکہ معمول کی تراویح میں شامل ہو جائیں۔

ایسے میں کاروباری لوگوں کے لئے استثنیٰ فراہم کرنا ٹھیک بات نہیں ہے۔ یہ بات ٹھیک ہے کہ قیام اللیل نفلی عبادت ہے تاہم کاروباری حضرات یا دیگر مصروف لوگ اگر فرصت ہو تو نمازِ تراویح ضرور ادا کریں اور جس طرح مسلمانوں کی اکثریت نمازِ تراویح ادا کرتی ہے ویسے ہی کریں اور شارٹ کٹس سے بچنے کی حتی الامکان کوشش کی جائے۔

اُمید ہے کہ خاکسار کی گذارشات آپ کی تشفی کے لئے کافی ہوں گی تاہم اگر مزید بھی کوئی اشکال ہوں تو براہِ راست کتاب و سنت کا علم رکھنے والے حضرات سے معلوم کر سکتی ہیں کہ اپنے محدود علم کے باعث خاکسار عمومی موضوعات تک ہی آپ کی رہنمائی کر سکتا ہے۔

شکریہ

Muhammad Ahmed کہا...

اردو کے حوالے سے گذارشات کچھ وقفے سے پیش کرتا ہوں۔

bushra khan کہا...

Mohtarmi

Salam e masnoon


I hereby Accept your Apology about the difficulty of Roman Urdu. Am Extremely sorry..!

آپ کی اپنی مادری ذبان کے بیچ بیچ میں ایک غیر مانوس ذبان کے الفاظ لکھ دیئے جائیں تو الجھن و بے ربتی کا پایا جانا ضروری ہے. اور اگر سارا کا سارا مضمون ہی غیر مانوس ذبان میں ہو تو پڑھنے میں دشواری سمجھنے میں دشواری.

رومن میں لکھتی ہوں تو آپ کے لیے مصیبت اور اردو میں میرے لیئے. آپ کی سہولت کی خاطر غیر مانوس میں مانوس کو شامل کرتی جاوں گی تا کہ آپ کی الجھن کچھ کم ہو. پر عادت بنائیے دومن کی .


Che Das Pandra Roza Taraweeh ka aap ne jo kaha ke log zor o shor se Ehtemam karte hain Nehayt galat hai. Mai aap ki Rae se kulli اتفاق karti hun.

جیسے تراویح
Bojh ban gai ho unke liye ke jitna jaldi ho sake jaan چھڑائیں

Hamare han ki surate haal ko dekhte hue Aap ke han ki 6,10,15 Roza Tarawi wale hazraat zara موتدل mizaj o qayal ke lagte hyn.

کیونکہ ہمارے ہاں بعض مساجر میں - سہ روزہ تراویح کا اہتمام ہوتا ہے یعنی تین دن میں قرآن ختم. اور شہر کی ایک دو مساجد میں - یک شبی شبینہ یعنی ایک رات میں پورا قرآن مجید پڑھایا جاتا ہے.

یک شبی شبینہ میں پہلے سے اعلان کر دیا جاتا ہے بلکہ در و دیواروں پر Posters چسپاں کردئے جاتے ہیں اس اعلان کے ساتھ کہ...

افطار کرنے کے فوری بعد لوگ مسجد آجائیں. گھڑی دیکھتے رہتے ہیں کہ جونہی مغرب کی انتہا کا وقت ختم ہوا دو تین منٹ بعد عشاء کی جماعت کھڑی ہوجائگی. اور سحر کا وقت ختم ہونے سے آدھا پون گھنٹہ قبل پورا قرآن ختم ہوجائگا. چونکہ وہ آخری وقت ہو گا سحری کھانے کا تو اُسی مسجد میں سحری کا بندوبست بھی ہوگا. اس تراویح میں صرف نوجوان شریک ہوتے ہیں. بہت Fast پڑھنے والے قاریوں کو دُور دُور سے تلاش کر کے لایا جاتا ہے.


Rahi Bees Rakaat Tarawih wala mamla tow ye bhi Apni jagah ek اٹل Haqiqat hai ke Hazrat Umar (raz) Ba zaath Qud jamat se 20 Rakath Tarawih kabhi ada nahi kiye aur na imamat kiye Bees Rakath ada karne walon ki.

Aur - Hadees ki kitab apne samne rakh ker agar مضمون likhti hoti to wahi likhti jo aap ne likha hai. Chunke mere samne koi kitab nahi thi mai zabani likh rahi thi isiliye mujh se Galti hui likhne men. Aap ne taseeh farma di aap ka bahot bahot shukriyah. So I have no Hesitation to accept my Mistake.

Aap ka kahna sahi hai ke Allah ke Nabi (saw) ne Farmaya: "Mujhe Darr hua ke kahin ye Namaz Musalmano per Farz na kar di jae."

Jabke maine likha "ke Musalman isey Farz na samajh len."

......

اب یہاں کچھ متفرقات پر اضہار خیال

Ye jitne bhi nao jawan 6,10,15 Rozah Tarawih wale hyn. Ye sari raat mohalle o bazaron men Hulladd bazi, Thatta, CheeQ o Pukar, Raasta chalte logon ko pareshan karna, Bhaag Daodd Machane men lage rahte hain. Unke Maa Bap bhi unhe nahi Toktey. Shayd woh isliye bhi nahi Tokte ke Ghar men aake udham machaynge. Ghar walon ke sukoon ko Ghaarat karenge. Ramzan men Aatish Bazi ye aur bhi Taklif de surate haal hai. Mohallon men chalte chalte dusron ke gharon men Pataka phenk denge aur Bhaag lenge. Ye Badtamizi ki Hadd hai. Na koi bolne wala hota hai na koi Tokne wala hota hai. Saari Raat ek mohalle se dusre mohalle yahi tamashe karte phirte hain.

Ab ijazat chahti hoon.

Wassalam

Bushra khan

Muhammad Ahmed کہا...

اگر آپ کی اردو لکھنے کی استعداد کی بات کریں تو میں عرض کروں گا کہ آپ کی مشکلات صرف مشق کی کمی کی وجہ سے ہیں۔ آپ زیادہ سے زیادہ اردو ٹیکسٹ پڑھیں اور لکھیں تو یہ سب مشکلات دور ہو جائیں گی۔

جو مشکلات آپ نے اردو کے حوالے سے ہی بتائیں اس قسم کی مشکلات نو آموز لوگوں کو ہر زبان میں پیش آتی ہیں اور رفتہ رفتہ مشق کے ذریعے ان مشکلات پر قابو پایا جا سکتا ہے۔

جیسے انگریزی زبان میں ہمیں پتہ چلتا ہے کہ

لفظ (car) "کے" سے نہیں ہوتا بلکہ "سی" سے ہوتا ہے۔
لفظ (physics) "ایف" سے نہیں بلکہ "پی ایچ" سے ہوتا ہے۔
لفظ (chemistry) "کے" سے نہیں بلکہ "سی ایچ" سے ہوتا ہے۔
لفظ (certain) "ایس" سے نہیں بلکہ "سی" سے ہوتا ہے۔

لیکن یہ سب باتیں نو آموز لوگوں کو کچھ عرصے ہی پریشان کرتی ہیں اور رفتہ رفتہ مشق سے یہ الجھنیں دور ہو جاتی ہیں۔

اردو کا بھی بعینہ یہی معاملہ ہے۔

اسی لئے میں نے مشورہ دیا تھا کہ آپ اردو محفل جوائن کر لیں تاکہ زیادہ سے زیادہ اردو لکھنے اور پڑھنے کی وجہ سے مشق میں اضافہ ہو جائے۔ اردو محفل کا لنک یہ ہے۔

http://www.urduweb.org/mehfil/

اردو لغت کا لنک یہ ہے۔

http://www.urduencyclopedia.org/urdudictionary/

ایک تبصرہ شائع کریں

اردو میں تبصرہ پوسٹ کرنے کے لیے ذیل کے اردو ایڈیٹر میں تبصرہ لکھ کر اسے تبصروں کے خانے میں کاپی پیسٹ کر دیں۔


FB Like Test

رعنائیِ خیال پر تبصرہ کیجے ۔ بذریعہ فیس بک