عید آنے والی ہے



عید آنے والی ہے


ماں!
ہم اپنے گھر کب جائیں گے
یہاں کیمپ میں دل نہیں لگتا
نہ کھلونے ہیں نہ دوست
بس آنسو ہی آنسو ہیں

دیکھو!
میرے کپڑوں پہ
مفلسی کے داغ لگ چکے ہیں
انہیں تبدیل کرنا ہے
اور
نئے جوتے بھی لینے ہیں

تم بولتی کیوں نہیں ہو ماں!
کیا روزِ عید بھی میں
بھوک کا روزہ
صبر کے ساتھ افطار کروں گا
بابا سے کہو نا
گھر چلتے ہیں۔

شاعرہ : سحر


بشکریہ : کامی شاہ

8 تبصرہ جات : اپنی رائے کا اظہار کریں:

جاوید گوندل ۔ بآرسیلونا ، اسپین کہا...

۔۔۔۔ افتار ۔۔۔۔۔ کو ۔۔۔۔افطار۔۔۔ سے بدل لیں۔

نظم میں درد بھی ہے اور معاشرے کے منہ پہ طمانچہ بھی۔ جبکہ حکومت۔۔ـ انھیں نا شرم آتی ہے نا ذمہداری کا احساس

محمد احمد کہا...

جاوید صاحب،

ٹائپو کی تصیح کا شکریہ!

واقعی ہمارے عہد میں حکومتی اداروں کی بے حسی عروج پہ ہے ورنہ عوام تو پھر بھی کسی نہ کسی طرح سطح پر اپنی سی کوشش کر رہے ہیں۔

افتخار اجمل بھوپال کہا...

ميری کشتی خدا کے آسرے پر چھوڑ کے ہٹ جا
ميری کشتی اگر اے ناخدا تکليف ديتی ہے

کشتياں سب کی کنارے پر پہنچ جاتی ہيں
ناخدا جن کا نہ ہو ان کا خدا ہوتا ہے

طارق راحیل کہا...

میری جانب لاء مکمل طور پر درست قرار پائے ہیں
اس لئے مبارک باد عید قبول فرمائیے


تحفہ میں یہ لنک دیکھ لیجئے

http://www.dgreetings.com/eidulfitr/eid-ul-fitr-01.html
عید مبارک بھی قبول کیجئے


Hasrat Hay Tumhari Deed Karain

Tum Aao To Hum Bhi Eid Karain



Kuch Dair To Dil Ko Chain Milay

Kuch Roz To Man Ka Phool Khilay



Kehtay Hain Eid Ki Aamad Hay

Ab Log Bhi Kuch Ta’eed Karain



Tum Aao To Hum Bhi Eid Karain…

Tum Say Yeh Aik Guzarish Hay



Yeh Apnay Dil Ki Khowahish Hay

Aik Baar Milo, Aik Baar Milo



Har Baar Yehi Takeed Karain

Tum Aao To Hum Bhi Eid Karain



Jab Ghum Kay Badal Chayay Thay

Us Waqt Bhi Tum Na Aaye Thay


Is Baar Bhi Tum Nahi Aai Ho

Sub Dushman Yeh Tanfeed Karain



Tum Aao To Hum Bhi Eid Karain…

Maana Kay Hum Deewanay Hain


Sub Baataon Say Anjanay Hain

Jab Apnay He Baiganay Hain


Kya Ghairon Say Umeed Karain

Tum Aao To Hum Bhi Eid Karain

کاشف نصیر کہا...

پوسٹ پڑھ لی جی

محمد احمد کہا...

بجا فرمایا افتخار صاحب آپ نے

ع ۔ ناخدا جن کا نہ ہو ان کا خدا ہوتا ہے

محمد احمد کہا...

طارق راحیل صاحب،

بلاگ پر خوش آمدید!

خوبصورت عید کارڈ اور نظم کا بہت شکریہ۔

محمد احمد کہا...

کاشف نصیر صاحب توجہ کا شکریہ

رعنائیِ خیال پر تبصرہ کیجے ۔ بذریعہ فیس بک